الیکشن کمیشن،نواز شریف، عمران خان، جہانگیر ترین

0
493

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) میں پاناما لیکس کے حوالے سے وزیر اعظم اور دیگر افراد کے خلاف دائر نا اہلی ریفرنس کی سماعت ہوئی جس میں اس معاملے پر سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک سماعت ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی)، پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی)، پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی) اور عوامی مسلم لیگ کی جانب سے پاناما لیکس کے معاملے پر وزیراعظم نواز شریف، وزیر اعلیٰ شہباز شریف، وزیر خزانہ اسحٰق ڈار، کیپٹن (ر) صفدر اور حمزہ شہباز کی نااہلی کے لیے الیکشن کمیشن میں درخواست دائر کی گئی تھی۔

اسی طرح عمران خان پر غلط بیانی اور اثاثے چھپانے جبکہ جہانگیر ترین کے خلاف قرض معاف کرانے کے الزام میں انفرادی طور پر الیکشن کمیشن میں درخواستیں دائر کی گئی تھیں۔

یہ بھی پڑھیں: پاناما لیکس پر نااہلی ریفرنس: وزیراعظم کو نوٹس جاری
جہانگیر ترین کے خلاف ملک خلیل احمد اور بلال مصطفیٰ بھٹا جبکہ عمران خان کے خلاف شاہ نواز ڈھلوں نامی شخص نے الیکشن کمیشن میں درخواستیں جمع کرائی تھیں۔

الیکشن کمیشن نے وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف دائر چار ریفرنس کی سماعت سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک ملتوی کردی جبکہ عمران خان اور جہانگیر ترین کے خلاف دائر تین درخواستوں کو خارج کردیا۔

اس کے علاوہ عوامی نیشنل پارٹی کے سینیٹر لیاقت ترکئی اور کیپٹن (ر) صفدر کے خلاف درخواست پر سماعت 16 نومبر تک ملتوی کردی گئی ہے، ان دونوں پر بھی آف شور کمپنیوں سے متعلق معلومات چھپانے کا الزام ہے۔

چیف الیکشن کمشنر سردار رضا خان کی سربراہی میں ہونے والی سماعت میں وزیر اعظم کے وکیل سلمان اسلم بٹ نے موقف اختیار کیا کہ چونکہ پاناما کے معاملے پر سپریم کورٹ سماعت کررہی ہے لہٰذا فیصلہ آنے تک الیکشن کمیشن کو سماعت روک دینی چاہیے۔

تاہم اس درخواست پر پاکستان پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی نے اعتراض اٹھایا ، پیپلز پارٹی کے وکیل لطیف کھوسہ نے موقف اختیار کیا کہ سپریم کورٹ میں جاری کیس میں وہ فریق ہی نہیں لہٰذا الیکشن کمیشن سماعت جاری رکھے۔

پی ٹی آئی کے وکیل حامد خان نے موقف اختیار کیا کہ سپریم کورٹ نے سماعت روکنے کا کوئی حکم نہیں دیا اور الیکشن کمیشن کو مکمل طور پر یہ اختیار حاصل ہے کہ وہ اپنی کارروائی جاری رکھے اور ان ریفرنسز پر فیصلہ سنائے۔

تاہم الیکشن کمیشن نے تمام دلائل سننے کے بعد فیصلہ کیا کہ اس معاملے میں سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک مزید کارروائی نہیں کی جائے گی۔

ادھر الیکشن کمیشن نے نااہلی ریفرنسز پر عمران خان اورجہانگیر ترین سے جواب طلب کرلیا۔ دونوں رہنماؤں کی نااہلی سے متعلق اسپیکر قومی اسمبلی کی طرف سے بھیجے گئے ریفرنسز پر 16نومبر کے لیے نوٹس جاری کئے گئے ہیں۔

نااہلی ریفرنس کی سماعت چیف الیکشن کمشنر سردارمحمد رضا نے کی۔ چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ ریفرنس میں عمران خان اورجہانگیر ترین کی حاضری ضروری ہے۔

سردار محمد رضا نے کہا کہ اب بال ہمارے کورٹ میں آگئی ہے، مقررہ مدت میں فیصلہ کرنا ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY