بھارتی جنرل کے سامنے ہتھیار ڈالنے والے پاکستانی لیفٹیننٹ جنرل نیازی

1
6523

امیر عبد اللہ خان نیازی مغربی پاکستان کی علیحدگی اور آزاد بنگلہ دیش کے قیام کے موقع پر بھارتی جنرل کے سامنے ہتھیار ڈالنے والے پاکستانی لیفٹیننٹ جنرل ہیں۔
ابتدائی زندگی
موجودہ بھارتی پنجاب کے پٹھان گھرانے میں پیدا ہوئے۔ 1932ء میں برٹش آرمی میں بطور سپاہی بھرتی ہوئے اور 1942ء میں انہیں کنگز کمیشن دیدیا گیا۔ قیام پاکستان سے قبل انہوں نے برٹش آرمی کے لیے متعدد ایسے کارنامے انجام دیے جس میں انہیں بہادری کے ایوارڈ دیے گئے۔ ان ایوارڈ میں ملٹری کراس کا ایوارڈ بھی شامل ہے۔ جاپان میں برٹش آرمی کی جانب سے بہادری دکھانے پر انہیں ٹائیگر نیازی کا خطاب دیا گیا۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ بھارتی فوج اور بنگالی عوام کے ہاتھوں پاکستانی فوج کی شکست اور جنرل نیازی کا بھارتی جنرل ارروڑہ کے سامنے ہتھیار ڈالنے کا واقہ ایک ایسا عمل تھا جو ہر اس محب وطن پاکستانی کے دل پر زخم کی طرح نقش ہو گیا جس نے یہ واقعہ دیکھا۔

پاکستانیوں کا ایک حلقہ اسے پاکستان کی تاریخ کا سیاہ ترین دن قرار دیتا ہے۔ اس کے بعد وہ پاکستان کے دیگر نوے ہزار فوجیوں کی طرح جنگی قیدی بن کر بھارت کی حراست میں چلے گئے۔

حمود الرحمن کمیشن کی جوغیر حتمی رپورٹ منطر عا م پر آئی ہے اس میں بھی انہیں اس شکست کے اسباب میں انہیں کافی بڑا ذمہ دار قرار دیا گیا۔

جنرل نیازی آخر وقت تک اپنی پوزیشن کا دفاع کرتے رہے اور موت کے سامنے ہتھیار ڈالنے سے محض چند ہفتہ قبل انہوں نے ایک ٹی وی پروگرام میں کہا تھا کہ ’وہ فوج کے سسٹم کا ایک چھوٹا سا حصہ تھے اس لیے انہوں نے ہتھیار ڈالنے کے احکامات پر عملدرآمد کیا حالانکہ ان کا ذاتی خیال یہ تھا کہ وہ مزید لڑ سکتے تھے اور بھارتی فوج کو ایک لمبے عرصے تک الجھائے رکھ سکتے تھے۔

حمود الرحمن کمیشن کی رپورٹ کے مطابق یہ اپنے جنسی اسیکنڈلز کے لیے ایک نام رکھتے تھے۔ اس کے علاوہ کمیشن نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ وہ مشرقی پاکستان میں اپنی حیثیت کو اسمگلنگ کے لیے بھی استعمال کرتے رہے۔

SHARE

1 COMMENT

  1. Aisay he baighairet loag fouj ko nokri k leay join kurtay hein, halan k fouj ko jehad k leay join kuro warna aour koi Naukri kur lo, Gen Niazi Mourda Baad.

LEAVE A REPLY