کنیز نور علی کی دو نظمیں

0
40

بدکردار

ہم پیدائیشی عاشق لوگ ہیں
کسی پہ مرے بغیر رہ نہیں سکتے
۔۔۔۔کسی شعر, کسی لفظ,کسی فقرے ,کتاب.
کسی پھول پتی ڈال ۔۔۔۔۔۔
، چلنے والی ہوا
ڈھلنے والی دھوپ ۔۔۔۔
چڑھنے والے چاند ۔۔۔۔
ڈوپنے والے تارے ۔۔۔
کسی جسم
کسی روح
سوچ
بات
مسکان
کسی نین
پر
عاشق ہوئے بغیر ہمیں سانس نہیں آتی

ہم ایسی لطیف روحوں کے لیے
سماج نے اک لفظ چنا ہے
جو بہت کثیف ہے

کنیز نور علی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک مستقل ناراضگی

خدو خال پر پھیلی ہوئی ہے …

لہجوں , لفظوں میں گھلی ہوئی ہے ……

اب ہم کلام نہیں کرتے ……

اب ہم انجام چاھتے ہیں ….
ہر رشتے کا تعلق کا ….
نوحہ ہے اب دل میں ….
ایک مستقل ناراضگی ….
اپنے آپ سے بھی جاری ہے ……..

اب ہم خود کو بھی ,چاھتے کم کم ہیں

اپنے من سے رات کے پچھلے پہر

گفتگو بھی کم کم ہے ……

دل کے دالانوں میں
آنکھ کے ایوانوں میں
ان کا آنا کم کم ہے …..

ایک مستقل ناراضگی …..
خدو خال پر پھیلی ہوئی ہے ….

کنیز نور علی

SHARE

LEAVE A REPLY