امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کی جانب سے نئی امیگریشن انفورسمنٹ پالیسیز کے اعلان کے بعد ملک میں غیرقانونی مقیم لاکھوں غیرملکیوں کو امریکا بدر کرنے کے خطرات پیدا ہوگئے ہیں۔
نئی پالیسیوں کے مطابق ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی جیسے جرائم میں سزا پانے والے حتیٰ کہ کسی جرم میں ملوث ہونے کے شبہہ پر بھی غیرملکی باشندوں کو امریکا بدر کیا جائے گا۔

امریکی وزیر داخلہ جان کیلی کی طرف سے جاری ہدایات کے مطابق امریکا میں غیرقانونی طور پر موجود ایسے غیرملکی جو کسی بھی جرم میں ملوث ہوں ملک بدر کئے جانے کیلئے اولین ترجیح ہوں گے۔

انہوں نے بتایا کہ غیرقانونی تارکین وطن کیلئے کسی دکان سے خریداری کے دوران کوئی چیز چرا لینا یا اس طرح کا کوئی اور معمولی جرم یا پھر غیرقانونی طور پر امریکی سرحد عبور کرنا بھی ملک بدر کئے جانے کیلئے کافی جواز تصور کیا جائے گا۔

قبل ازیں سابق صدر براک اوباما کی انتظامیہ میں محض غیرقانونی طور پر سرحد عبور کرکے امریکا داخل ہونے کو کسی غیرملکی کو امریکا بدر کرنے کیلئے کافی جواز تصور نہیں کیا جاتا تھا

SHARE

LEAVE A REPLY