نورین لغاری،مجھے خود کش حملے میں استعمال کیا جانا تھا۔ڈی جی آئی ایس پی آر

0
245

ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفورکا کہنا ہے کہ آپریشن ’رد الفساد‘ ملک سے فساد کو ختم کرنے کا ایک عہد ہے جس میں ہم سب شامل ہیں۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے آپریشن ’ردالفساد‘ کے حوالے سے پریس بریفنگ دیتے ہوئے مزید کہا کہ 22فروری کو آپریشن ’ردالفساد‘ شروع ہوا،جس کے تحت 15 میجر آپریشنز کیے گئے۔

انہوں نے کہا کہ آپریشن ’ردالفساد‘ کے دوران ایک ہزار 859غیر رجسٹرڈ افغانوں کو گرفتار کیا گیا،ملک بھر سے 4 ہزار 83 ہتھیار برآمد کیے گئے،فاٹا میں آٹھ میجر آپریشنز کیے گئے ۔

میجر جنرل آصف غفور نے بتایا کہ فیس بک پر نورین کے پیغام کے بعد اس کے والدین نے آرمی چیف سے مدد کی اپیل کی، آرمی چیف نے ایم آئی کو بچی کو بازياب کرانے کے احکامات دیئے۔

اس موقع پر بازیاب ہونے والی نورین لغاری کا ویڈیو بیان میڈیا کو دکھایا گیا، جس میں اس کا کہناتھا کہ میں خود اپنی مرضی سے لاہور روانہ ہوئی تھی،مجھے خود کش حملے میں استعمال کیا جانا تھا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے بتایا کہ ڈی جی خان میں مقابلے کے دوران 10دہشت گرد مارے گئے، چمن میں انٹیلی جنس اطلاعات پر آپریشن کیا گيا، فورسز نے ایکشن کیا ،چمن میں گاڑی میں موجود 120 کلو دھماکا خیز مواد پکڑ لیا گیا، کراچی میں آپریشنز کی نوعیت الگ ہے

SHARE

LEAVE A REPLY