کیا دنیا کا آٹھواں عجوبہ دوبارہ دریافت ہو گیا

0
230

نیوزی لینڈ میں ماہرینِ آثار قدیمہ نے دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے دنیا کا وہ آٹھواں عجوبہ دوبارہ دریافت کر لیا ہے جو 130؍ سال قبل آتش فشاں پھٹنے کے بعد دفن ہو گیا تھا۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ انہوں نے آتش فشاں کی راکھ اور کیچڑ کے نیچے موجود گلابی اور سفید رنگ کے چبوترے دوبارہ تلاش کرلیے ہیں۔
کسی دور میں ان چبوتروںکو قدرت کا عجوبہ اور دنیا میں سلیکا کے سب سے بڑے ذخائر قرار دیا جاتا تھا۔
خدشہ ظاہر کیا جاتا ہے کہ یہ چبوترے 1886ء میں مائونٹ تاراویرا نامی آتش فشاں کے پھٹنے کے بعد تباہ ہوگئے تھے لیکن اب محققین کا کہنا ہے کہ انہوں نے وہ مقام تلاش کر لیا ہے جہاں یہ چبوترے دفن ہوگئے تھے۔

یہ امکانات بھی ظاہر کیے گئے ہیں کہ یہ عجوبہ وقت کی تباہ کاریوں سے محفوظ رہا ہے۔ ماہرین کی ٹیم کے رکن ریکس بن نے برطانوی اخبار سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا ہے کہ یہ چبوترے جنوبی نیم کرہ میں سیاحوں کی توجہ کا مرکز ہوا کرتے تھے۔
انہوں نے بتایا کہ برطانوی سیاح جہاز بھر کر یہاں آنے کیلئے پر خطر سفر کرتے تھے لیکن اُس وقت کی حکومت نے ان چبوتروں کا کبھی جائزہ نہیں لیا تھا اسلئے ان کے عرض البلد اور طول البلد کی کوئی معلومات موجود نہیں تھیں۔

SHARE

LEAVE A REPLY