تئیس جولائی1927ء انڈیا کا پہلاریڈیواسٹیشن بمبئی میں قائم ہوا

0
259

تاریخ کے آئینے میں[ترمیم]
مارچ 1926ء : انڈین براڈکاسٹنگ کارپوریشن ایک نجی کمپنی کی شکل میں قائم ہوئی۔
تئیس جولائی1927 ء : انڈین براڈکاسٹنگ کارپوریشن نے بمبئی میں اپنا اسٹیشن قائم کیا اور برصغیر پاک وہند میں ایک نشریاتی ادارے کی حیثیت سے کام کا آغاز کیا۔
1928ء : لاہور میں ایک چھوٹا ٹرانسمیٹنگ اسٹیشن قائم ہوا۔
اپریل 1930ء : ادارے کو انڈین اسٹیٹ براڈکاسٹنگ سروس کا نام دیا گیا اور اسے حکومت کے براہ راست کنٹرول میں دیدیا گیا۔
جنوری 1934ء : ادارے پر انڈین وائرلیس ٹیلی گرافی ایکٹ 1933 لاگو کیا گیا۔
جنوری 1935ء : صوبہ سرحد کی حکومت نے پشاور میں 250 کلوواٹ کا ٹرانسمیٹنگ سٹیشن قائم کیا
مارچ 1935ء : صنعتوں اور محنت کے سرکاری محکمے کے ماتحت آفس آف کنٹرولر آف براڈکاسٹنگ کے نام سے ایک ادارہ قائم کیا گیا۔
اگست 1935ء : مسٹر لیونل فیلڈن پہلے کنٹرولر آف براڈکاسٹنگ کی حیثیت سے تعینات ہوئے۔
جنوری 1936ء : دہلی ریڈیو اسٹیشن قائم ہوا۔
9 جولائی1936ء : سٹیشن ڈائریکٹر دہلی مسٹر اے ایس بخاری کا ڈپٹی کنٹرولر براڈکاسٹنگ کی حیثیت سے تقرر ہوا۔
8 جون 1936ء : انڈین سٹیٹ براڈکاسٹنگ سروس کا نام تبدیل کر کے آل انڈیا ریڈیو رکھا گیا۔
16 جولائی 1936ء : پشاور میں ایک اسٹیشن کا افتتاح ہوا اور اسے یکم اپریل 1937ء کو حکومت نے اپنی تحویل میں لے لیا۔
دسمبر 1937ء : لاہور سٹیشن کا آغاز ہوا۔
مارچ 1939ء : پشاور مرکز ریلے سٹیشن میں تبدیل ہوا۔۔
ستمبر 1939ء : مرکزی طور پر دہلی سے تمام زبانوں میں خبرناموں کی نشریات کا آغاز ہوا ، اسی سال ڈھاکہ میں بھی ایک اسٹیشن قائم ہوا۔
12 نومبر 1939ء : بمبئی ریڈیو اسٹیشن سے عید کے دن قائداعظم کی پہلا ریڈیو خطاب نشر ہوا۔
24 اکتوبر 1941ء : اطلاعات ونشریات کا محکمہ قائم ہوا۔
جولائی 1942ء : پشاور ریڈیو اسٹیشن باقاعدہ نشریاتی ادارے میں تبدیل ہوا۔
16 جولائی 1942ء : ریڈیو اسٹیشن پشاور کا باضابطہ افتتاح ہوا۔
فروری 1943ء : کنٹرولر براڈکاسٹنگ کے عہدے کا نام تبدیل کر کے ڈائریکٹر جنرل رکھا گیا۔
3 جون 1947ء : قائداعظم محمد علی جناح نے آل انڈیا ریڈیو سے اپنا تاریخی خطاب کیا اور برصغیر کے مسلمانوں کیلئے ایک نئی خودمختار مملکت پاکستان کے معرض وجود میں آنے کا اعلان کیا۔
14 اگست 1947ء : پاکستان کے وجود میں آنے کا اعلان نئے ادارے پاکستان براڈکاسٹنگ سروس نے کیا جس کا نام بعد میں تبدیل کر کے ریڈیو پاکستان رکھا گیا اور نشریاتی مراکز اور ٹرانسمیٹرز قائم کئے گئے۔
1948ء : راولپنڈی میں 500 واٹ شارٹ ویو ٹرانسمیٹرکے ریڈیو اسٹیشن اور کراچی میں 100 واٹ شارٹ ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ریڈیو سٹیشنوں کا افتتاح ہوا۔
1949ء : راولپنڈی میں 100 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
1950ء : کراچی میں نئے براڈکاسٹنگ ہاوس کا افتتاح ہوا۔
1951ء : حیدرآباد میں ایک کلوواٹ میڈیم ویوٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا سنگ بنیاد رکھا گیا۔
17 اکتوبر 1956ء : کوئٹہ میں ایک کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
15 اکتوبر 1960ء : ایک کلوواٹ شارٹ ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ راولپنڈی۔ 2 سٹیشن اور پشاور میں ریسیونگ سینٹر کا افتتاح ہوا۔۔
1970ء : اسلام آباد میں سٹاف ٹریننگ اسکول اور ٹیکنیکل ٹریننگ اسکول اور ملتان میں 120 کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ریڈیو سٹیشن کا افتتاح ہوا۔
1972ء : سابق صدر پاکستان :۔جناب ذوالفقار علی بھٹو نے 1972ءمیں ریڈیو پاکستان کو ایک آرڈیننس کے تحت کارپوریشن بنایا۔
پی بی سی ہیڈکوارٹرز اسلام آباد کی بلڈنگ کا سنگ بنیاد سابق صدر جناب ذو الفقارعلی بھٹو نے27اپریل 1972ءکورکھا ۔
21 اپریل 1973ء : نئے آئین کی تشکیل اور 1973ءمیں نفاذ کے بعد پارلیمنٹ نے پی بی سی ایکٹ 1973ءمنظور کرلیا
سمندر پار پاکستانیوں کیلئے عالمی سروس کا افتتاح ہوا۔
1974ء : خیرپور میں ایک سوکلوواٹ ٹرانسمیٹر کا سنگ بنیاد رکھا گیا۔
18 اگست 1975ء : بہاولپور میں 10 کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
1977ء : پاکستان براڈکاسٹنگ کارپوریشن کے مرکزی نشریاتی یونٹ اسلام آباد کیلئے ایک ہزار کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ نئے تعمیر شدہ نیشنل براڈکاسٹنگ ہاوس اسلام آباد میں افتتاح ہوا۔
1977ء : گلگت میں 250 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ریڈیو سٹیشن کا افتتاح ہوا۔ اسکردو میں 250 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ریڈیو سٹیشن کا افتتاح ہوا۔
1981ء : تربت میں 250 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ،
ڈیرہ اسماعیل خان میں 10 کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ، اور خضدار میں 250 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشنوں کا افتتاح ہوا۔
15 ستمبر 1982ء : فیصل آباد میں 250 واٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کا ریڈیو سٹیشن قائم ہوا۔
7 مئی 1986ء : خیرپور میں نئے براڈکاسٹنگ ہاوس کا افتتاح ہوا۔
1989ء : سبی میں 250 واٹ ٹرانسمیٹر کے ریلے اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
ایبٹ آباد میں 250 واٹ ٹرانسمیٹر کے ریلے اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
اگست 1993ء : چترال میں ایک کلوواٹ ایف ایم ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا افتتاح ہوا۔
1996ء : لورالائی میں 10 کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا سنگ بنیاد رکھا گیا
ژوب میں 10 کلوواٹ میڈیم ویو ٹرانسمیٹر کے ریڈیو اسٹیشن کا سنگ بنیاد رکھا گیا۔
1997ء : وفاقی وزیر اطلاعات مشاہد حسین سید نے پی بی سی کی خبروں کی کمپیوٹرائزیشن اور خبروں کے بلیٹنز کی متن اور آواز کے ساتھ انٹرنیٹ پر دستیابی کے نظام کو افتتاح کیا۔
اکتوبر 1998ء : ریڈیو پاکستان کے ایف ایم کی نشریات کا آغاز ہوا۔
2002ء : صدر جنرل پرویز مشرف نے پی بی سی اسلام آباد میں ایف ایم 101 اسٹیشن کا افتتاح کیا۔
2005ء : گوادر ، میانوالی ، سرگودھا ، کوہاٹ ، بنوں اور مٹھی میں ایف ایم اسٹیشن قائم ہوئے۔
18اگست 2008ء : نیشنل براڈکاسٹنگ سروس کاافتتاح سابق وزیراطلاعات ونشریات شیری رحمان نے 18اگست 2008ء کوکیا۔

SHARE

LEAVE A REPLY