پاناما فیصلے سے آئین کی 40 شقیں معطل اور وفاقی نظام درہم برہم ہوگیا، نوازشریف کو بحال اور انکے اہلخانہ کیخلاف احتساب عدالت کی کاروائی روکی جائے: درخواست میں موقف

سپریم کورٹ میں درخواست شہری شاہد اورکزئی کی جانب سے دائر کی گئی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ وفاقی ڈھانچے کا تحفظ اعلیٰ عدلیہ کی آئینی زمہ داری ہے، 28 جولائی کے فیصلےمیں بنیادی حقوق کی آڑ میں وفاقی نظام درہم برہم اور آئین کی 40 شقیں معطل کی گئیں، پاناما فیصلے کا جائزہ لینے کے لئے سات رکنی بنچ تشکیل دیا جائے۔

درخواستگزار کا کہنا ہے کہ کوئی بھی بنیادی حق عوام کے بنیادی حق سے بالاتر نہیں، سپریم کورٹ کے جج آئینی طریقہ کار کا ادراک نہیں رکھتے، پاناما کیس میں کسی وکیل نے ججز کو وفاقی نظام بارے متنبہ نہیں کیا، عدالتی فیصلہ سے کابینہ بھی تحلیل ہوگئی، صدرمملکت ان حالات میں تنہا راہ گئے۔ درخواست میں نوازشریف کو عارضی طور پر بحال کرنے اور شریف فیملی کیخلاف احتساب عدالت کی کارروائی روکنے کی استدعا کی ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY