جو ریفرنسزمیرے خلاف بنائے گئے میں ان کوقطعاً نہیں مانتا ،لندن پہنچنے پر نواز شریف کی گفتگو

0
183

سابق وزیر اعظم نواز شریف منگل کی شام غیر ملکی ایرلائین کی پرواز سے لندن پہنچ گئے۔ ان کے ہمراہ ان کی بیٹی مریم صفدر اور داماد کیپٹن صفدر بھی لندن پہنچے ھیں۔ حالیہ دورے کا مقصد لندن میں زیر علاج محترمہ کلثوم نواز کی عیادت بتایا جاتا ھے

لندن پہنچنے پر میڈیا سے گفتگو کرتے ھوئے سابق وزیر اعظم نے اپنے خلاف بنائے گئے ریفرنسز اور احتساب کو تعصبانہ کاروائی اور ملک میں انتشار پھیلانے کی سازش قرار دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ میری حکومت نے ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کیا، ھم نے لوڈ شیڈنگ اور دہشت گردی کا خاتمہ کیا۔ جو ملک میں روشنیاں لے کر آئے ان کوھی نا اہل قرار دیا گیا۔یہ احتساب نہیں ھمارے خلاف انتقامی کاروائی ھے۔

سابق وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ میں اس احتساب کو بالکل نہیں مانتا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ پیچھے نہیں ہٹیں گے اور ملک کو ترقی کی بلندیوں پر لے جائیں گے۔

نواز شریف نے شکوہ کرتے ہوئے کہا کہ کسی اور کو بھی پکڑو ،صرف وزیراعظم کا ہی گلا دبوچتے ہو،ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ پاکستان میں گزشتہ 70 سال سے گھناؤنا مذاق ہورہا ہے ، خود کی مثال دیتے ہوئے کہااگر میری نہیں بنتی تو کیا کسی کی بھی نہیں بنتی ہے۔

انہوں ڈکٹیٹر زکو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کے ایک ڈکٹیٹرنے ہماری حکومت کو ختم کیا، یہ انتقام پر مبنی ہےاور ملک میں انتشار پھیلانے کے مترادف ہے۔

انہوں نے ججوں کو بھی آڑے ہاتھوں لیا اور کہا کہ میں اس احتساب کو بالکل نہیں مانتاہوں، پانچ ججوں کے فیصلے سے ملک کا ستیا ناس ہونا شروع ہوگیا ہے، جو ریفرنسزمیرے خلاف بنائے گئے میں ان کوقطعاً نہیں مانتا ،میرے خلاف جھوٹے کیسز بناکرآپ نیب کے حوالے کردیتے ہیں۔

پاکستان میں دہشتگردی نے پھرسر اٹھانا شروع کردیا ہے، ہم سے پہلے بھی دہشتگردی تھی اس کا نوٹس کیوں نہیں لیا گیا۔

نواز شریف نے کہا ہم نے ملک کو ایٹمی قوت بنایا اس کا صلہ یہ ملا کہ ملک بدر کردیا گیا، ماڈل ٹائون رپورٹ شائع ہونے پر ان کا کہنا تھا کہ تمام رپورٹس منظرعام پر آنی چاہئیں ، ورنہ کمیشن بننے کاکوئی فائدہ نہیں۔

سید کوثر کاظمی

SHARE

LEAVE A REPLY