امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے الزام عاید کیا ہے کہ ایران اپنے جوہری ہتھیاروں کی تیاری پر کام کررہا ہے۔ اس کے خلاف ٹھوس اقدامات کرنا ہوں گی۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ 12 مئی سے قبل ایران کے ساتھ طے پائے جوہری معاہدے کے حوالے سے فیصلہ کریں گے۔

’العربیہ‘ چینل کے مطابق وائیٹ ہاؤس میں نائجیریا کے صدر محمد بخاری کے ہمراہ ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب میں صدر ٹرمپ نے کہا کہ پوری دنیا جانتی ہے کہ ایران جوہری ہتھیار اپ گریڈ کررہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کے ساتھ حقیقی جوہری معاہدے کے لیے مذاکرات ہوسکتے ہیں۔

امریکی صدر نے کہا کہ امریکا ایران کے ساتھ اس کے جوہری پروگرام پر ٹھوس بات چیت چاہتا ہے۔ موجودہ معاہدے کی کوئی حیثیت نہیں۔

امریکی صدر کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو نے دعویٰ کیا ہے کہ ایران خفیہ طورپر جوہری ہتھیارحاصل کرنے کی کوشش کررہا ہے تاہم ایران نے نیتن یاھو کےالزامات کو مضحکہ خیز قرار دے کر مسترد کردیا ہے اور کہا کہ تہران کا کوئی خفیہ جوہری منصوبہ نہیں۔

ایران کےجوہری توانائی ادارے کے سربراہ علی صالحی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے کسی خیر کے فیصلے کی توقع نہیں۔ وہ جلد ہی ایران کے ساتھ طے پائے معاہدے سے نکل جائیں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY