کائینات کا اتنابڑا نقصان ۔۔۔ تحریر ؛ ڈاکٹر نگہت نسیم

2
373

میں سوچتی تھی کہ انسان کو تادیر زندہ رہنے کی ہوس اس سے سب کچھ کرواتی ہے ۔۔ گھر کی لڑایئوں سے لے کر جنگوں تک سب کچھ اپنی بقا کے لئے کرتا ہے ۔ پر آجکل ایک نئی سوچ میں ہوں اور سوچ سوچ کر دکھی ہو رہی ہوں کہ انسان کو اپنی بقا سے زیادہ “ لالچ“ نے مارا ہے ۔۔

انسان میں لالچ کسی جنون کی طرح بڑھتی جا رہی ہے اور اپنے جنون میں انسان کیا ، حیوان کیا ، شہر کیا ، ملک کے ملک تباہ و برباد کرتا جارہا ہے ۔ روئے زمین پر کوئی ایسا ملک ، کوئی ایسی قوم ، کوئی ایسا سربراہ دور دور تک دکھائی نہیں دے رہا جس کے پاس اقتدار و اختیار ہو اور اسے اپنے خدا کا ڈر بھی ہو ۔۔ اسے اپنے آباؤ اجداد کی شرم اور لحاظ بھی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنے لوگوں کا خیر خواہ بھی ہو ۔۔۔

ہر طرف لالچ نے دہائی ڈالی ہوئی ہے ۔۔۔
سب سے زیادہ دولت ہو
سب سے زیادہ جائیداد ہو
ہر رتبہ ، مرتبہ، اقتدار ہو
سب سے زیادہ ڈگریاں ہوں
سب سے زیادل علم ہو
سب سے زیادہ مشہور نام و کام ہو

اس حرص اور لالچ میں انسان اپنے ہی ماں باپ ، بہن بھائی ، بچے ، رشتے دار دوست احباب ، الغرض کوئی بھی سامنے آئے اسے روندتے ہوئے گزر جاتا ہے ۔۔ شدید اختلاف ، انتقام اور جنگ ایک معمول کا واقعہ ہو کر رہ گئے ہیں ۔

خدا جانے کس قوم پر ابراہیمی صحیفے اترے تھے
خدا جانے کس قوم پر توریت اتری تھی
خدا جانے کس قوم پر زبور اتری تھی
خدا جانے کس قوم پر انجیل اتری تھی
خدا جانے کس قوم پر قران اترا تھا

یوں دکھائی دے رہا ہے جیسے اس صدی میں ہر قوم پر حرص و لالچ سزا کے طور پر نازل ہو چکی ہے ۔
جبھی تو کوئی سوچ ہی نہیں رہا ۔۔۔ لڑایئوں اور جنگوں میں انسان ہی نہیں ، حیوان ، چرند پرند ، زمیں آسمان ، پھول پودے ، پہاڑ ، دریا ، جھرنے ، آبشار ، سمندر ۔۔ حتی کہ ندی نالے بھی متاثر ہوتے ہیں اور ذی روح جینے سے پہلے مر جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔

طمع ، حرص اور لالچ کی باتوں میں آکر کائینات کا اتنابڑا نقصان ۔۔۔ کون بھر پائے گا اور کیسے بھر پائے گا ۔۔؟

ڈاکٹر نگہت نسیم

SHARE

2 COMMENTS

LEAVE A REPLY