عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک
عید آ گئی اے جانِ جہاں ، عید مبارَک

یاقوت لبوں پر ترے قربان شگوفے

چندا ترے ہنسنے کا نشاں ، عید مبارَک

دیدار جنہیں تیرا ملے اُن کو بھی تبریک

جو تجھ کو جہاں دیکھے ، وَہاں عید مبارَک

ملنے کو تجھے صف میں کھڑے ہوں سرِ دَربار

ملکائیں ، شہنشاہِ زَماں ، عید مبارَک

بوسوں کی ترے رُخ کے ملے تتلی کو عیدی

ہر سمت ہو خوشیوں کا سماں ، عید مبارَک

اَللہ مری ساری خوشی بھیج دے تجھ کو

غم بھیجے ترے سارے یہاں ، عید مبارَک

راتیں تری تاباں رہیں ، دِن نورِ دَرخشاں

خوشبو ہو تری اور جواں ، عید مبارَک

کشمش ہو دَہَن میں تو لب اَنگور کو چومیں

منہ میٹھا ہو ، نمکین زَباں ، عید مبارَک

ہر پل ترا عشرت کدے میں شان سے گزرے

غنچوں سا ہنسے ، غنچہ دَہاں ، عید مبارَک

وُہ جوڑیں گے ہر شعر کے کب پہلے حرف کو!

کر دیتے ہیں قیس اِن میں نہاں عید مبارَک

LEAVE A REPLY