میری پہچان پاکستان,14اگست تقریری مقابلے کے آڈیشن ۔ڈاکٹر نگہت نسیم بطورجج شامل

0
1495

دنیا کے ہر ملک میں رواج ہے کہ جب بھی وہاں نئی قومیں آباد ہوتی ہیں وہ ضرور اپنی پہچان بتانے کے لئے اپنی اپنی تنظیمیں بناتی ہیں ۔ اسی طرح آسٹریلیا میں بھی ہر قوم نے ہر شہر میں اپنے ملک کی تہذیب اور تاریخ سے آشنائی کروائی ہے ۔ بلکہ کئی ملکوں کی ایک سے زائد آرگنایئزیشنز ہیں جنہوں نے اپنا تعارف اور رستہ منفرد رکھا ہے۔ انہیں میں‌ سے سڈنی میں پاکستان کے حوالے سے “‌میری پہچان پاکستان ” ایک ایسی آرگنایئزیشن ہے جو اپنی منفرد پہچان رکھتی ہے ۔

میری پہچان پاکستان 2016 میں وجود میں آئی اور اس کے بانی ” سید عاطف فہیم اور ان کی اہلیہ ارم عاطف “‌ ہیں ۔ ارم نےبتایا “‌میری پہچان پاکستان “‌ ایک نان پرافٹ‌ آرگنایئزیشن جس کے دوبنیادی مقاصد ہیں ۔ سب سے اہم آسٹریلیا میں‌رہنے والے بچوں کوتاریخی حوالوں سے پاکستان کے مثبت رخ سے متعارف کروانا تاکہ ان میں جزبہ حب الوطنی پیدا ہو اوردوسرا مقصد مختلف پروگرامز کے زریعے فنڈز اکٹھا کر کے پاکستان میں ضرورتمندوں کی مدد کرنا تاکہ ان کی زندگی میں مثبت تبدیلی لائی جا سکے۔

میری پہچان پاکستان نے امسال یوم آزادی کے موقع پر تقاریر کے آڈیشن کے لئے مجھے بطور جج مدعو کیا گیا تھا ۔ میرے علاوہ محترم جناب عمران اور محترمہ صائمہ بھی ججز میں شامل تھے ۔ انگلبن کے کمیونٹی سینٹر کے کمرے میں پاکستان کی چھوٹے چھوٹے پرچموں سے سجا بورڈ تھا جو دور سے دیوار معلوم ہوتا تھا ۔ اس کے سامنے بڑی سی سفید میز پر حصہ لینے والوں بچوں کے نام اور قوائد و ضوابط کے ساتھ پین اور پنسل بھی رکھے ہوئے تھے ۔

بچوں کی تقاریر کے آڈیشین بعد کویز پروگرام کے لئے بھی آڈیشن تھے ۔ دونوں مقابلوں کے لئے بچے اور ان کے والدین مقررہ وقت پر پہنچ چکے تھے اور ان کی ہمت بندھانے والے بہن بھائی دوست احباب کی وجہ سے خوب رونق سے لگی ہوئی تھی ۔ آڈیشین میں چھ بچوں نے حصہ لیا جن میں پانچ سال کی عمر سے لے پندرہ سال کی عمر تک کے بچوں نے حصہ لیا ۔ آج کا موضوع تھا “ پاکستان ایک نعمت “ ہے ۔ ججز کے مطابق سارے بچے ایک دو نبمر سے آگے پیچھے تھے ۔ بچوں میں پاکستان سے محبت اور اس رحمت اور نعمت خداوندی کا ادراک اپنی جگہ ہم سب کے لئے بڑی سرشاری کی بات تھی ۔ بچوں نے پاکستان میں چار موسموں ، سمندروں ، دریاؤں ، قدرتی معدنیات کے ساتھ ساتھ اپنے ہیروز کو بھی اللہ پاک کی نعمتوں میں رکھا جو مجھے بہت اچھا لگا ۔۔۔ دو دومنٹ کی تقریر میں ہر بچے نے ثابت کیا صاحب وطن ہونا بذات خود ایک بہت بڑی نعمت ہے ۔ اور بجا طور پر آسٹریلیا میں‌رہنے والے بچوں کوتاریخی حوالوں سے پاکستان کے مثبت رخ سے متعارف کروانے اور ان میں جذبہ حب الوطنی پیدا کرنے میں ارم اور عاطف کامیاب تھے ۔

آڈییشن کے اختتام پر ارم اور عاطف نے سارے رزلٹ مکمل کئے جس کے نتائج کا اعلان چودہ اگست کے موقع پر کیا جائے گا ۔ عاطف نے تینوں جج صاحبان کے تاثرات ریکارڈ کئے اور ان کا بچوں کے ساتھ یادگار تصویری سیشن ہوا۔ ۔ ۔ اور ساتھ ہی ہم سب آڈیشین روم سے باہر آگئے کہ کوئز پروگرام کے آڈیشن کا وقت شروع ہونے والا تھا۔

SHARE

LEAVE A REPLY