صدارتی الیکشن: عارف علوی سندھ اور خیبر پختونخوا اسمبلی سے کامیاب

0
59

 بلوچستان اسمبلی میں پاکستان تحریکِ انصاف کے امیدوار عارف علوی خیبر پختونخوا اسمبلی اور بلوچستان اسمبلی سے کامیاب ہو گئے ہیں۔

بلوچستان اسمبلی میں پاکستان تحریکِ انصاف کے امیدوار عارف علوی کامیاب ہو گئے ہیں، انھیں 45 ووٹ پڑے جبکہ مولانا فضل الرحمان کو پندرہ ووٹ ملے جبکہ اعتزاز احسن کو کوئی ووٹ نہیں ملا۔ بلوچستان اسمبلی میں 61 میں سے 60 ووٹ کاسٹ ہوئے تھے۔

ادھر سندھ اسمبلی میں صدارتی انتخاب کے سلسلے میں ووٹنگ ہوئی جہاں پاکستان پیپلز پارٹی کے امیدوار اعتزاز احسن کو 100 ووٹ ملے، پی ٹی آئی امیدوار عارف علوی 56 جبکہ اپوزیشن کے متفقہ امیدوار مولانا فضل الرحمان صرف ایک ووٹ حاصل کر سکے۔

خیبر پختونخوا اسمبلی کے نتائج کے مطابق پاکستان تحریک اںصاف کے امیدوار عارف علوی کامیاب قرار پائے ہیں، انھیں 78 ووٹ ملے جبکہ ان کے مدمقابل اعتزاز احسن کو 5 اور مولانا فضل الرحمان کو 26 ووٹ پڑے۔

خیال رہے کہ صدارتی انتخاب میں حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی پی پی) کے عارف علوی، متحدہ اپوزیشن کے مولانا فضل الرحمان اور پیپلز پارٹی کے اعتزاز احسن کے درمیان مقابلہ ہے۔

قومی اسمبلی، سینیٹ اور چاروں صوبائی اسمبلیوں میں پولنگ بغیر کسی وقفے کے شام 4 بجے تک جاری رہی۔ چیف الیکشن کمشنر نے ریٹرننگ افسر کے فرائض انجام دیئے۔

ووٹ کاسٹ کرنے کے لیے تمام ممبران کے پاس متعلقہ اسمبلی کے شناختی کارڈ کی موجودگی کو لازمی جبکہ کسی کو بھی موبائل فون ساتھ لانے پر پابندی لگائی گئی تھی۔

کامیاب امیدوار کے نوٹیفکیشن کے بعد نئے صدرِ مملکت سے چیف جسٹس آف پاکستان حلف لیں گے۔ واضح رہے کہ ملک کے 12 ویں صدر ممنون حسین کے عہدے کی مدت رواں ماہ 9 ستمبر کو ختم ہو رہی ہے۔

سابق صدر آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو نے بھی ووٹ کاسٹ کیا، جبکہ مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف بھی ووٹ کاسٹ کرنے پارلیمنٹ پہنچے۔

قومی اسمبلی میں آج اس وقت دلچسپ صورتحال پیدا ہو گئی جب عمران خان اپنا ووٹ کاسٹ کرنے لگے تو ان کے پاس اسمبلی کارڈ نہ تھا جس پر پیپلز پارٹی کے پولنگ ایجنٹ نے اعتراض کر دیا، تاہم سپیکر کی مداخلت پر عمران خان کو ووٹ ڈالنے کی اجازت مل گئی۔

ڈاکٹر عارف علوی کا کہنا تھا کہ سینیٹ اور قومی اسمبلی میں واضح اکثریت سے کامیاب ہوں گا، تحریک انصاف اور اتحادی جماعتوں کے سارے ووٹ مجھے ہی ملیں گے۔

پاکستان تحریک انصاف کے صدارتی امیدوار نے مزید کہا کہ ایک ماہ کے دوران سب سے رابطے رہے، ووٹ لینے ہر جگہ گیا، جو آئین کہتا ہے وہی میری ترجیحات ہوں گی۔ انہوں نے کہا کوشش ہوگی لوگوں کے تن پر کپڑا اور سر پر چھت ہوں، انصاف اور روزی ملے، سابق صدر اور میرے کردار میں فرق ممنون حسین یا پھر میرے منتخب ہونے کے بعد پوچھیے گا۔

SHARE

LEAVE A REPLY