پیر کے روز کام کے نئے ہفتے کے آغاز پر دنیا کے بہت سے ملکوں میں کارکنوں کو اس حیران کن صورت حال کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے کہ کمپیوٹر ہیکنگ کے ایک نئے عالمگیر واقعے کے اثرات اب تک کے اندازوں سے کہیں زیادہ ہیں۔

اس واقعے میں ہیکرز نے ’رَینسم ویئر‘ کہلانے والے سافٹ ویئر کے ساتھ دنیا کے 150 ملکوں میں کمپیوٹر نیٹ ورکس کو نشانہ بنایا۔ ’وانا کرائی‘ نامی اس ابتدائی حملے کے بعد برطانیہ میں ہسپتالوں کا نیٹ ورک، جرمنی میں ریلوے کا قومی نظام اور درجنوں دیگر ملکوں میں حکومتی اداروں اور سینکڑوں نجی کمپنیوں کے کمپیوٹر نیٹ ورک مفلوج ہو کر رہ گئے۔

ماہرین کا خیال ہے کہ یہ ہیکنگ رقوم ہتھیانے کے لیے کیے جانے والے سائبر حملوں کا آج تک کا دنیا کا سب سے بڑا واقعہ ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY