ایک تاثراتی غزل ۔ از۔ احمد علی برقی

0
174

بیتاب ہے کیوں روح مری میرے بدن میں
اک حشر بپا آج ہے کیسا مرے مَن میں
یہ کس کے اشارے پہ سبھی ناچ رہے ہیں 
کیوں دشمنِ جاں بھائی کا بھائی ہے یمن میں
ہر سمت تباہی کا نظر آتا ہے منظر 
باقی نہ رہی اب وہ چمک دُرِّ عدن میں
دم توڑ رہی ہے کہیں بیوی ،کہیں بچے 
ہیں کتنے مہ و مہر ستمدیدہ گہن میں
مِل بیٹھ کے طے کرلیں گلے شکوے خدارا
اچھے نہیں لگتے ہیں جوانسال کفن میں
ہے آپ کو حق میرا کہا مانیں نہ مانیں
بے ساختہ لکھتا ہوں جو آیا مرے من میں
اشعار نہیں ہیں یہ مرا سوز دروں ہے
جلتا ہے مرا خونِ جگر میرے بدن میں
کیوں برسرِ پیکار ہیں آپس میں یہ سوچیں
ہر شخص کو جینے کا ہے حق اپنے وطن میں
بے موت نہ مارے کہیں مرغانِ چمن کو
بارود کی بدبو کی گُھٹَن صحنِ چمن میں
ہیں پیروِ اسلام وہ سنی ہوں کہ شیعہ
اچھا ہے سبھی مِل کے رہیں اپنے وطن میں
شاداب رہیں گلشنِ اسلام کے یہ پھول
جس طرح سے خوشبو ہے بسی مُشکِ خُتن میں

LEAVE A REPLY