ایم کیو ایم کے سربراہ فاروق ستار نے عائشہ منزل سے یادگار شہدا تک مارچ کرنے کا اعلان کیا جو چند گھنٹوں بعد ہی واپس لے لیا گیا۔
ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم نے ریلی کا اعلان تو کیا، لیکن ضلعی انتظامیہ سے اس حوالے سے اجازت نہیں لی، جس کے بعد یادگار شہد ا پر حاضری کا پروگرام محدود کردیا گیا ہے ۔
ایم کیو ایم پاکستان نے ایک اور یوٹرن لے لیا ،پارٹی سربراہ نے یادگار شہدا تک مارچ نکالنے کے لئے ویڈیو پیغام دیا ، لیکن پارٹی نے پروگرام کا محدود کرتے ہوئے مارچ کو منسوخ کردیا ۔

ایم کیو ایم پاکستان کے ڈپٹی کنوینر کامران ٹیسوری نےکہا ہے کہ رابطہ کمیٹی فاروق ستار کے ہمراہ یادگار شہد پر حاضری دے گی ۔
ترجمان ایم کیوا یم پاکستان نے اعلامیے میں کہا کہ یادگارِشہداء پرحاضری کاپروگرام محدودکیاجارہاہے،جس میں عوام اور کارکنان شریک نہیں ہوں گے ۔
ترجمان کے مطابق اس موقع پر عمران فاروق اور دیگر شہدا کی قبروں پرفاتحہ خوانی کی جائے گی۔

ذرائع کے مطابق مارچ کے اعلان پر ضلعی انتظامیہ کو پیشگی اطلاع دینا اور اجازت لینا ضروری ہوتا ہے،کیونکہ ریلی اور جلوس کے انعقاد کے لئے ضروری انتظامات کئے جاتے ہیں، ایم کیو ایم نے اس حوالے سے کوئی اجازت نہیں لی تھی۔

SHARE

LEAVE A REPLY