شہباز شریف اور رانا ثنا ء اللہ کو استعفے کیلئے مزید سات دن کی مہلت

0
94

آل پارٹیز کانفرنس نے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف اوروزیرقانون رانا ثنا ء اللہ کو استعفے کیلئے مزید سات دن کی مہلت دے دی۔

سات جنوری تک استعفے نہ آئے تو آٹھ جنوری کو اے پی سی کی اسٹیئرنگ کمیٹی احتجاج کا طریقہ کار طے کر کے احتجاج کی کال دے گی۔

طاہر القادری پہلے ہی خبردار کرچکے ہیں کہ عوامی عدالت بھی لگ سکتی ہے، دھرنا ہوسکتا ہے یا کچھ اور بھی ہوسکتا ہے۔

اے پی سی میں تحریک انصاف ، پیپلز پارٹی، ق لیگ، ایم کیو ایم، جماعت اسلامی، پی ایس پی اور دیگر جماعتوں نے شرکت کی۔

آل پارٹیز کانفرنس کے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ شہباز شریف ، رانا ثنا اور دیگر شریک ملزمان 7 جنوری سے پہلے مستعفی ہوجائیں، 31 دسمبر کی ڈیڈ لائن میں 7 جنوری تک اضافہ کیا جاتاہے، اگر استعفے نہ آئے تو 8 جنوری کو آئندہ کےاحتجاجی لائحہ عمل کااعلان کیاجائے گا۔

اے پی سی نے تمام صوبائی اسمبلیوں اور سینیٹ سے مطالبہ کیا کہ رانا ثنا اورشہباز شریف کے استعفوں کی قرارداد منظور کروائی جائیں۔

کانفرنس کے اعلامیہ میں مزید کہا گیا کہ اے پی سی سانحہ ماڈل ٹاؤن اورختم نبوت کے قانون میں تبدیلی کی مذموم حرکت کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے، سانحہ ماڈل ٹاؤن میں ن لیگ کی قیادت ، نوازشریف ، شہباز شریف اور رانا ثنا سمیت حکومت پنجاب کے اہلکار ملوث ہیں۔

اعلامیہ میں کہا گیا کہ تجاوزات ہٹانے کی آڑ میں ذاتی و سیاسی مقاصد کے لئے گولیاں چلاکر لوگوں کوشہید اور زخمی کیا گیا، ختم نبوت کے قانون میں تبدیلی کی کوشش آئین پاکستان پرحملہ ہے،ن لیگ اقتدار پر مسلط رہنے کا جواز کھو چکی ہے، ختم نبوت کے قانون میں تبدیلی کی مذموم حرکت کے ذمہ داروں کو کڑی سزا دی جائے۔

اعلامیہ کے مطابق شہدائے ماڈل ٹاؤن کے ورثا صرف جسٹس باقر نجفی کمیشن کی رپورٹ حاصل کرپائے،شریف برادران کے برسراقتدار رہتےہوئے حصول انصاف ناممکن ہے،حکومت انصاف کی فراہمی میں مکمل طورپر ناکام ہوچکی ہے۔

SHARE

LEAVE A REPLY