سلیم کاوش کی تازہ نظم۔ نیا سال

0
52

تازہ نظم

“نیا سال”

بدلتے سال کا اِک لمحہِ نحیف تریں
تمہارے ہِجر کے ایّامِ رَفتگاں لے کر
تمہارے وَصْل کی امیدِ جانفزا بن کر
مرے نصیب کے تارے کو ڈھونڈنے نکلا
تمہاری یاد کے سب رَتْجَگے تمہاری قسم
تمہارے وَصْل کی صُبحِ خرامِ ناز بنے
بس ایک شوقِ ملاقات کی نوید لیے
ہر ایک جذبہِ دِل پھر تمہارے نام ہوا
کسے خَبَر کہ مِرا عِشق نا رَسا تھا مگر
تمہاری ذات میں اُترا تو بیکراں ٹھہرا
گُذشتہ سال کا گُذرا وہ آخری لَمحہ
مجھے مِلا تو نیا سالِ مہرباں ٹھہرا

سلیم کاوش

SHARE

LEAVE A REPLY