خلد میں یہ بلال مضطر بھی۔کاش پائے تراجوارحسین

0
178

گلشن عشق کی بہار حسین
دین احمد کے جانثار حسین

اپنا بھی الفت و مودت کا
تجھ سے رشتہ ہے استوار حسین

ہے رضائے بتول و حیدر پر
سب کی بخشش کا انحصار حسین

کس قدر مخلص و یقیں والے
تو نے پائے تھے خانثار حسین

رحمت کبریا سے ہوں میں بھی
تیری نسبت سے مالدار حسین

زندگی بھی کیا خدا کے لیے
فقر کو تو نے اختیار حسین

مجھ سے عاصی کا دل بھی رہتا ہے
یاد میں تیری بے قرار حسین

خلد میں یہ بلال مضطر بھی ۔
کاش پائے ترا جوار حسین

بلال رشید

SHARE

LEAVE A REPLY