آئینہ خانوں میں جلتی سر دیوار آنکھیں
ھیں پر اسرار بہت عشوہ پرکار آنکھیں

کرہ ارض پر ھیں مرکز سیار آنکھیں
جہاں گذیدہ گئے وقت میں شمار آنکھیں

ھویئں بازار میں یوسف کی خریدار آنکھیں
پردہ شب میں ستاروں کا ھیں شعار آنکھیں

روشنی رنگ طرب چاند کا غبار آنکھیں
مہر ماہ انجم و انوار و نغمہ بار آنکھیں

تمازتوں کے سفر میں ھیں آبشار آنکھیں
خرد کی قید میں ھیں تازہ گرفتار آنکھیں

چراغ شب میں عبث نعمت دیدار آنکھیں
کیہي جلتے ھوۓ پربت کیہی چنار آنکھیں

کبھی خزاوں کا موسم کبھی بہار آنکھیں
دنگ ھیں دیکھہ کے دولت کے بھی انبار آنکھیں

فقر و فاقہ میں بھی رد کرتی ھیں دینار آنکھیں
غموں کی دھوپ میں ھنستی ھوئ فنکار آنکیھیں

حجرہ چشم میں تنہائی کا شکار آنکھیں
وحشت ھجر سے گبھرايئں کیئ بار آنکھیں

چارہ گر دردمیں ڈھلنے کو ھیں تیار آنکھیں
شاعری رنگ سخن قافیہ بردار آنکھیں

شاھین رضوی

SHARE

LEAVE A REPLY