خونچکاں برما میں اب ہے کیسا منظر دیکھئے۔ از۔احمد علی برقی

0
161

خونچکاں برما میں اب ہے کیسا منظر دیکھئے
نذرِ آتش ہورہے ہیں ہرطرف گھر دیکھئے
رو رہے ہیں خوں کے آنسو آج جو حساس ہیں
چشمِ تر میں ان کی اشکوں کا سمندر دیکھئے
تنگ ہے ان کے لئے اپنے وطن کی ہی زمیں
ہورہے ہیں لوگ کیسے گھر سے بے گھر دیکھئے
بوڑھے بچے اور جواں ہیں فرطِ غم سے جاں بلب
جن کے پیچھے اک درندوں کا ہے لشکر دیکھئے
مغربی ملکوں کے جو، اک مُہرۂ شطرنج ہیں
ہیں تن آسانی میں شاداں وہ تونگر دیکھئے
مُلکوں ملکوں گھوم کر جو کررہے ہیں شاعری
کرتے ہیں ایسے میں کیا اب وہ سخنور دیکھئے
کربلا کے بعد ہے اک دوسری یہ کربلا
بیٹھ کر چُپ چاپ یہ کٹتے ہوئے سَر دیکھئے
صرف ترکی نے دیا ملی اخوت کا ثبوت
وحدتِ اسلامی کا یہ اُس کا جوہر دیکھئے
مقتدی ہی جب نہ ہوں گے تو کرے گا کیا امام
شیخ صاحب اپنے یہ محراب و منبردیکھئے
کررہے ہیں بیٹھ کر کیا آپ برقیؔ اعظمی
جھانک کر ایسے میں اپنے آپ اندر دیکھئے

LEAVE A REPLY